جراثیم کُش صابن(Antibacterial Soap)

جراثیم کش صابن(Antibacterial Soap)
جراثیم کش صابن آپ نے دیکھے اور یقیناً استعمال بھی کیے ہوں گے۔ میڈیا پر چلنے والے ان کے اشتہار بھی دیکھے ہوں گے۔ ان اشتہارات میں دعویٰ کیا جاتا ہے کہ یہ صابن اور صرف یہی صابن آپ کی صحت کے ضامن ہیں، یہ صابن اتنی بیماریوں اور اتنے بیکٹیریا کو سیکنڈوں میں ہلاک کر کے آپ کو صحت مند بناتے ہیں۔اگر آپ نے سادہ صابن استعمال کیا تو آپ بیمار ہو جائیں گے اور آپ کی صحت کو خطرات لاحق ہو جائیں گے۔ آئیے آج ایک نظر ان جراثیم کش صابنوں پر ڈالتے ہیں۔
جراثیم کش صابن:
کوئی بھی ایسا صابن جس میں جراثیم کو مارنے کے لیے کوئی جراثیم کش (Antimicrobial)مادہ(Triclosan, Triclocarbon, Chloroxylenol & tetrasodium) استعمال کیا گیا ہو، جراثیم کش صابن کہلاتا ہے۔یہ صابن کچھ بیکٹیریا کو مار تو دیتا ہے مگر وائرس(Virus) پر اس کا کوئی اثر نہیں ہوتا اور یہ انسانی صحت کیلیے غیر مضر بیکٹیریا (Non-pathogenic)کو بھی تلف کر دیتا ہے ۔
مشہور امریکی ادارےFDAکی 42 سالہ تحقیق کے مطابق ان نام نہاد جراثیم کش صابنوں کے فوائد اور مثبت اثرات نہ ہونے کے برابر ہیں۔ FDAنے امریکہ میں ایسے صابن تیار کرنے والی کمپنیوں کو حکم دیا ہے کہ وہ 2016 کے اختتام تک ان صابنوں کے مفید اور مؤثر ہونے کے ثبوت فراہم کریں بصورت دیگر اپنی مصنوعات کی (Triclosan کو ہٹا کر) لیبلینگ تبدیل کریں یا 2016 کے بعد اپنی مصنوعات کی تیاری بند کردیں۔ FDA ان کو مارکیٹ سے ہٹانے کا حکم بھی دے سکتی ہے۔
FDAکی رپورٹ کے مطابق؛
1۔ سادہ صابن اور پانی بمقابلہ جراثیم کش صابن: جراثیم کش صابن سادہ صابن اور پانی کے مقابلے میں زیادہ مؤثر و مفید نہیں ہےالبتہ یہ مہنگا ضرور ہے۔
2۔ وائرس پر اثر: عام تاثر کے بر عکس یہ صابن وائرس(Virus) پر بالکل اثر انداز نہیں ہوتے۔ نزلہ اور زکام کے پھیلاؤ یہ صابن کوئی رکاوٹ نہیں ڈالتا۔ اس کے علاوہ سانس اور آنتوں کے انفیکشن کو روکنے میں ان کا کوئی کردار نظر نہیں آیا۔ نقصان دِہ بیکٹیریا (Pathogenic)کے ساتھ ساتھ غیر ضرر رساں بیکٹیریا(Non-pathogenic) کو بڑی تعداد میں ہلاک کر دیتا ہے۔
3۔ماحول دشمن: Triclosanمادے والے صابن ماحول دشمن ہیں، پانی کے ذخائر میں شامل ہو کر یہ مادہ الجی کے ضیائی تالیف(Photosynthesis) کو متاثر کر کے آکسیجن کی پیداوار میں کمی لاتا ہے۔ اس کے علاوہ امریکی سروے(USGS ) کے مطابق یہ چربی میں حل پذیر مادہ ہے جو جانوروں کے خون میں چربی کی مقدار کو بڑھا کر انہیں بیمار کر سکتا ہے۔
4۔اینڈو کرائن غدود پر اثر: Triclosanجانوروں میں تھائیرائیڈ ہارمون کے نظام پر اثر انداز ہوتا ہے اور ان میں کینسر، بانجھ پن اور جلد بلوغت جیسی بیماریا ں پیدا کر دیتا ہے۔
5۔جراثیم میں مزاحمت کا سبب: جراثیم کش صابن اور اس میں موجود مادے بیکٹیریا میں جراثیم کش مادوں کے خلاف قوت مدافعت یا مزاحمت پیدا کرنے کا سبب بن سکتے ہیں۔ WHOکے مطابق یہ خطرہ بڑھ رہا ہے اور کچھ بیکٹیریا میں مزاحمت یا مدافعت پیدا ہو چکی ہے۔ ان صابنوں کے مسلسل استعمال سے خدشہ ہے کہ صرف وہ بیکٹیریا بچ جائیں گے جو قوت مدافعت رکھتے ہوں گے جنہیں ختم کرنا آسان نہیں ہو گا۔
6۔صحت کے مزید مسائل:ایسے صابنوں اور ان میں شامل مادوں کے طویل استعمال سے بچوں میں قدرتی مدافعتی نظام طاقتور نہیں ہو پاتا اور ایسے بچے مختلف بیماریوں اور الرجی کا نسبتاً جلدی شکار ہو جاتے ہیں۔Triclosanجِلد میں سرایت کرنے والا مادہ ہے اور استعمال کرنے والوں کی 75 فیصد تعداد کے خون اور پیشاب میں پایا گیا ہے جو صحت کے مزید کئی مسائل کو جنم دیتا ہے۔
اپنی اور اپنے پیاروں کی صحت کا خیال رکھئیے۔ فی امان اللہ

Advertisements

Tagged: , , , , , , , , , , , , , , , , , , , ,

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: