Category Archives: عمومی

گنّا اور شوگر ملیں


گنّا اور اس کے موجودہ مسائل
گنا ہماری اہم فصلوں میں سے ایک فصل ہے۔ گذشتہ چند سالوں سے ہمارے کسان کپاس کی فصل کی جگہ گنا زیادہ کاشت کرنے پر مجبور ہوئے ہیں اور اب لگتا ہے کہ وہ گنے کی کاشت کو بھی خیر باد کہہ دیں گے۔ کپاس کی فصل کے ان گنت مسائل ہیں، مختلف ضرر رساں کیڑوں سے فصل کا تباہ ہوجانا، قیمت مناسب نہ ہونا، پانی کے مسائل، فصل پر اٹھنے والے اخراجات میں مسلسل اضافہ، کھادوں کی بڑھتی قیمت، کپاس کی کاشت کے حوالے سے حکومتی عدم دلچسپی اور کسی حکتِ عملی کا فقدان، کپاس کے کاشت کے مخصوص اضلاع میں دوسری فصلوں کی کاشت،۔ ان مسائل سے تنگ آکر کسان گنے کی کاشت پر مجبور ہوا۔ آج سے سات آٹھ سال پہلے یہ فصل حکومت کی مقرر کردہ امدادی قیمت پر با آسانی فروخت ہو جایا کرتی تھی۔۔ لیکن سال بہ سال اسکی قیمت گھٹنے لگی اور کبھی 250 روپے فی من بکنے والی فصل آج 182 روپے فی من کی مقرر کردہ قیمت میں بھی شوگر ملیں خریدنے سے انکاری ہیں۔ اگرچہ چینی کی قیمت 40 روپے سے 55 روپے فی کلو تک پہنچ چکی ہے۔ اس کی 3 اہم وجوہات ہیں؛
1۔ گنے کی فصل میں بے تحاشہ اضافہ۔کپاس کی فصل کے نقصانات سے دلبرداشتہ کسانوں نے گنے کی فصل کی اچھی قیمت ملنے کی آس اور امید میں اپنی زمینوں پر گنے کی کاشت کو ترجیح دی اور ہر سال اس رحجان میں اضافہ ہی ہوتا چلا گیا، اب اس سال(2017) میں شوگر ملوں کی استعدادِ کار سے زیادہ گنا دستیاب ہے اور مارکیٹ کے اصول طلب اور رسد کا فرق اب اتنا ہے کہ شوگر ملیں اپنی شرائط پر گنے لے سکتی ہیں۔ مزید یہ کہ شوگر ملوں کے پاس پچھلے سال کا چینی کا ذخیرہ ابھی موجود ہے۔
2۔ حکومتوں کی بے حسی اور عدم فعالیت۔ چونکہ زرعی پالیسی ہر صوبہ خود بنانے کا مجاز ہے اس لیے ہر صوبائی حکومت نے اپنے نرخ خود طے کرنے ہیں، لیکن دیکھا یہ گیا ہے کہ اس وقت کسی صوبائی حکومت کو کسان کے مسائل سے کوئی دلچسپی نہیں ہے۔ سندھ ہو یا پنجاب دونوں صوبوں میں گنے کے کاشت کاروں کو ذلیل و خواار کر دیا گیا ہے۔ سندھ میں 15 ستمبر 2017 کو سرکاری نرخوں کا اعلان ہو جانا چاہیے تھا اور شوگر ملیں 15 اکتوبر سے کرشنگ سیزن شروع کرنے کی پابند تھیں لیکن حکومت کی طرف سے امدادی قیمت کا اعلان دسمبر کے اختتام پر کیا گیا اور کرشنگ کا آغاز بھی بہت دیر سے کیا گیا ۔ نیز کچھ شوگر ملیں ابھی تک کرشنگ شروع نہیں کر سکی ہیں یا کرنا نہیں چاہتی ہیں۔ حکومت کی کوئی رٹ نظر نہیں آتی۔ کسانوں کے مسلسل احتجاج کے با وجود تا حال کچھ ہوتا نظر نہیں آ رہا۔ اگرچہ حکومت نے 10 روپے فی من زر تلافی بھی شوگر ملوں کو دینے کا اعلان کیا ہے۔
3۔ شوگر ملز مافیا کا کسانوں کا استحصال۔ گنے کی فصل میں بے تحاشہ اضافے کا نقصان یہ ہوا ہے کہ اب شوگر ملیں اپنی شرائط پر گنا لے رہی ہیں۔ گنے کی خریداری کے لیے وضع طریقہ کار میں بہت نقائص ہیں۔ گنے سے لدی ٹرالیوں کو بہت انتظار کرایا جاتا ہے، رقوم کی ادائیگی بہت دیر سے کی جاتی ہے۔ کچھ شوگر ملوں نے تو پچھلے سال کی رقم بھی کسانوں کو ابھی تک ادا نہیں کی ہے۔ سندھ میں حکمران خاندان کےہی گروپ کی 19 شوگر ملیں ہیں، اسے طرح پنجاب میں بھی شوگر ملوں کے مالک حکومت میں بیٹھے نظر آتے ہیں۔ یہ شوگر ملیں ایک مافیا کی طرح اپنی شرائط پر کام کر رہی ہیں۔ چونکہ یہ حکومت کا حصہ ہیں اس لیے کسانوں کا استحصال ان کے لیے آسان ہے۔ اپنی من پسند امدادی قیمت مقرر کرانا، اپنی مرضی سے کرشنگ کا آغاز کرنا وغیرہ اس کی واضح مثال ہیں۔

Advertisements

یوم آزادی 2017


آج 14 اگست 2017 کا دن ہے۔ پاکستان کی آزادی کے 70 سال پورے ہوئے۔
ان 70 سالوں میں ہم نے اس ملک کے ساتھ کیا کیا ظلم نہیں کیے! آج ہر برائی اور ظلم ہمارے ملک میں روا ہے۔ یہ ملک اسلام اور مسلمانوں کے نام پر حاصل کیا گیا تھا مگر آج اسلام اس ملک میں بدنام زیادہ ہے۔ آج ہمارے معاشرے میں ہر وہ برائی موجود ہے جو اسلام نے حرام اور ظلم قرار دی ہے۔ ہر قسم کی بد عنوانی، جھوٹ، فریب، ملاوٹ، ذخیرہ اندوزی، چور بازاری، قتل، زنا، شراب، لسانی و مذہبی عصبیت الغرض ہر برائی آج ہر طرف اپنے پنجے گاڑے ہوئے ہے۔ دہشت گردی کا عفریت ہزاروں جانوں کو لقمہ اجل بنا چکا ہے۔ مذہبی جنونیت اور عمومی جہالت کے ہاتھوں ہر سال ہزاروں قیمتی جانیں اللہ کو پیاری ہو جاتی ہیں۔ آج پاکستان میں ہزاروں مافیا پنپ رہی ہیں اور معاشرے کو اپنے مکروہ دھندوں سے آلودہ کر رہی ہیں۔
آج ہمیں ان سب برائیوں کے خلاف ایک عزم مصمم سے نبرد آزما ہونا ہی ہو گا اگر پاکستان کو بچانا اور ایک خوش حال ملک بنانا ہے۔ اپنے معاشرے میں عدل و انصاف کا نظام لانا ہوگا تا کہ ہماری آئندہ نسلیں ایک پر سکون زندگی بسر کر سکیں۔
دعا ہے کہ میرا پیارا مالک ہمیں ان جہالتوں اور ظلمتوں سے نجات دلائے اور خوشحالی اور امن و سکون پاکستان کا مقدر بنائے۔ آمین

آخر قبر میں تو خالی ہاتھ ہی جانا ہے


روزنامہ جنگ جیسے اخبار کی خبر دیکھئیے۔۔۔آخر ہمارے ضمیر کو ہو کیا گیا ہے؟ بی بی سی اپنی خبر پر قائم ہے اور ہمارے اخبارات جھوٹ کا پلندہ شائع کرنے سے باز ہی نہیں آتے۔ آخر کوئی تو اخلاقیات ہونی چاہئیے۔۔۔۔۔۔باطل کا ساتھ دے کر یہ لوگ کتنا مال بنا لیں گے، جانا تو آخر قبر ہی میں ہے جہاں سبھی خالی ہاتھ ہی جاتے ہیں کیا فقیر اور کیا بادشاہ۔۔۔۔۔۔
اللہ ہم سب کو ہدایت دے۔۔۔۔۔۔آمین
%d8%ac3
%d8%ac1

%d8%ac2

%d8%ac4

%d8%ac5%d8%a8

%d8%ac6%d8%a8
بی بی سی کی اپنی خبر کی صداقت پر اصرار
http://www.bbc.com/urdu/pakistan-38679048
جنگ اخبار کی خبر کا لنک
http://e.jang.com.pk/01-19-2017/karachi/pic.asp?picname=252746
بی بی سی کی اصل خبر کا لنک
http://www.bbc.com/urdu/world-38601645

شرم باقی نہیں رہی ہے۔۔


وطنِ عزیز میں صحافت کا معیار تو دن بدن گرتا ہی چلا جا رہا ہے۔ دھوکہ اور فریب دینا شاید ہماری سرشت میں شامل ہو چکا ہے۔ کتنے فریبی میڈیا اور سوشل میڈیا پر بے نقاب ہو چکے ہیں مگر لوگ ہیں کہ باز ہی نہیں آتے۔ معمولی باتوں پر بریکنگ نیوز اور اسپیشل رپورٹیں آپ سب نے ملاحظہ تو کی ہونگی۔ آج ایک نمونہ پیش خدمت ہے؛
کوئی تین سال پہلےیوٹیوب پر  ٹیکنالوجی کی ایک ٹرِک پوسٹ کی گئی تھی، اس پوسٹ  کا لنک نیچے دیا گیا ہے، پہلے اسے ملاحظہ کیجئیے اور پھر اپنے صحافیوں کے اعلیٰ صحافتی معیار کی داد دیجئیے۔ بعض چینلز پر اس خبر کی رپورٹ بھی چلائی جا چکی ہے۔
اور اس بات کی داد بھی دیجئیے کہ اب یوٹیوب کے شعبدوں کو لوگ اپنی ایجاد کہتے ہوئے ذرا نہیں شرماتے اگر چہ اصل پوسٹ کوئی 3  سال پرانی ہی کیوں نہ ہو۔ ایک معمولی ٹرِک کو ایک عظیم اور حیرت انگیز ایجاد قرار دینا واقعی دِل گردے اور ڈھٹائی کا کمال ہے۔ ایسی اسکرین اور ایسی عینک کیا کہنے اس ایجاد کے۔۔۔۔۔۔
ان صاحبان کو بھی داد دیجئیے جو کسی اور کے کام کو اپنی ایجادات قرار دیتے ہوئے حکومتی تحسین و معاونت اور سرپرستی کے طلب گار بھی ہیں۔
واقعی شرم تم کو مگر نہیں آتی۔

youtube link:

تصویری خبر
BL-news

آج نیوز کا لنک: Aaj news link: http://urdu.aaj.tv/latest/%D8%AD%D8%A7%D9%81%D8%B8-%D8%A2%D8%A8%D8%A7%D8%AF%D8%AD%DB%8C%D8%B1%D8%AA-%D8%A7%D9%86%DA%AF%DB%8C%D8%B2-%D8%A7%DB%8C%D9%84-%D8%B3%DB%8C-%DA%88%DB%8C-%D8%8C%DA%A9%D8%A7%D9%85-%D9%86%D8%B8%D8%B1/

معیارِ صحافت


 آج دو فروری کے جنگ کراچی میں یہ خبر بہت سے لوگوں نے پڑھی ہو گی۔اول تو یہ کوئی خبر نہیں ہے کی فروری میں 29 دن ہیں۔  پھر اسے ایک خاص خبر کی شکل دینا اور ایک مخصوص نایاب صورت میں پیش کرنا۔
ایسی فضول بیشمار خبریں ہیں جو انتہائی غلط اور گمراہ کن ہوتی ہیں۔
میرا مقصد تنقید صرف یہ ہے کہ آپ کچھ تحقیق تو کر لیا کریں۔
اس صحافی نے کیا تحقیق کی ہو گی؟یہ خبر صرف بطور نمونہ پیش خدمت ہے۔ باقی قارئین بہتر سمجھتے ہیں۔
سن 2044 کا فروری بھی سن 2016 کے فروری ہی کی طرح ہو گا۔ سن 2044 اور سن 2016 کے کیلنڈر کے عکس بھی ملاحظہ کر لیجئیے۔
اب 823 سال کے ہندسے کو دیکھئیے اور اس صحافی کی تحقیق کی داد ضرور دیجئیے۔۔۔

 

2016

2016

feb-16

feb-44

شرم تم کو مگر نہیں آتی


کل 30 جنوری 2016 کو ہمارے محترم وزیرِاعظم صاحب نے فرمایا کہ
“آلو کی قیمت 4 یا 5 روپے فی کلو تک پہنچ گئی ہے، اب حکومت اس سے زیادہ کیا قیمتیں کم کرے اور عوام کو ریلیف دے”
تیل کی قیمتوں میں معمولی کمی کا احسان عظیم کرتے ہوئے وزیر اعظم صاحب نے تو حاتم طائی کی قبر کو بھی لات دے ماری۔ اب عوام بیچارے کیا کریں۔ خوشی سے ناچ بھی رہے ہیں اور بلند آواز میں گاتے بھی جا رہے ہیں
شرم تم کو مگر نہیں آتی
شرم تم کو مگر نہیں آتی
شرم تم کو مگر نہیں آتی

ٹریفک کے مسائل – سواریاں


پاکستان میں ٹریفک کا نظام انتہائی ناقص اور ناکارہ ہے۔ ٹریفک کے اس ناقص نظام کا خمیازہ عوام کو حادثات میں جانی اور مالی نقصانات کی صورت برداشت کرنا پڑتا ہے۔ اس نظام کی خرابی کے بے شمار عوامل ہیں جن میں سے کچھ زیرِبحث لائے جائیں گے۔
آج ہم یہ دیکھیں گے کہ سڑکوں پر محفوظ سفر کے لیے کچھ سواریوں (Vehicles)کیلیے درکار لازمی شرائط و ضوابط
( لوازم جن کا اہتمام اشد ضروری ہے) کس طرح نظرانداز کیے جاتے ہیں
سائیکل:
آج سے کچھ 25 سال پہلے اگر آپ پاکستان میں چلنے والے سائیکل دیکھتے تو چند چیزیں ہر سائیکل کا لازمی حصہ ہوتی تھیں؛
1۔ گھنٹی،۔ آج آپ کو گھنٹی صرف بچوں کی سائیکلوں میں ہی لگی ملے گی۔
2۔ڈائنمو، ہیڈلائیٹ اور بیک لائیٹ(لائیٹ نہ ہونے کی صورت میں پولیس والے کسی پہیے کی ہوا نکال دیا کرتے تھے)
موٹر سائیکل:
موٹرسائیکل کی سواری آج موت کے کنویں کی سواری بن کر رہ گئی ہے؛ کچھ ضروری چیزیں آپ نے بھی نوٹ کی ہونگی؟
1۔موٹر سائیکل یا بائیک کے عقب نما آئینے ہوا کرتے تھے۔ آج بھی نئی بائیک کے ساتھ یہ آئینے موجود ہوتے ہیں مگر
سڑک پر آنے والے موٹر سائیکلوں کی ایک قلیل تعداد ہی میں یہ آئینے نظر آئیں گے۔(اتار کر رکھ لیے جاتے ہیں)
2۔ بڑے شہروں میں آپ کو ایک خاصی بڑی تعداد میں ایسے موٹر سائیکل نظر آئیں گے جن کی ہیڈلائیٹ نہیں ہو گی۔
ایک بڑی تعداد بریک لائیٹ کے بغیر سڑکوں پر دوڑ رہی ہے۔ سمت نما(انڈیکیٹرز) بھی اکثر غائب ہی ملیں گے۔
3۔ موٹر سائیکل سوار بغیر ہیلمٹ کے نظر آتے ہیں۔
4۔ رفتار پیما(اسپیڈ میٹر )بھی ناپید ہوتے جارہے ہیں۔
5۔ اکژ افراد اپنے موٹر سائیکل کی فاصلہ پیما(اوڈومیٹر) کی تار نکال دیتے ہیں تا کہ جب موٹر سائیکل بیچی جائے تو کم چلی
ہوئی معلوم ہو۔(قومی مکاری اور دھوکہ دہی کا وصف آخر کہاں اور کب کام آئے گا؟)
آٹو رکشہ:
آٹو رکشہ کم فاصلے کے لیے ایک بہترین اور سستی سواری ہوا کرتا تھا مگر اب ریڑھ کی ہڈی کے نقائص کی سب سے بڑی وجہ؛
1۔ اگر آپ موجودہ رکشوں میں بیٹھے ہیں تو یقیناً نوٹ کیا ہو گا کہ ان کی سیٹ انتہائی تکلیف دہ اور رکشہ کی سواری کمر اور
ریڑھ کی ہڈی کیلیے نہایت خطرناک ہوتی ہے۔ (رکشے کا ڈیزائن مسافروں کیلیے بہت غیرمحفوظ ، بیہودہ اور خطرناک ہے)
2۔ کرائے کے تعین کے لیے قانونی میٹرز اکثر موجود ہی نہیں ہوتے۔ اگر موجود ہوں بھی تو استعمال نہیں کیے جاتے۔
کرائے کا تعین اپنی من مانی سے کیا جاتا ہے، مسافر کی مجبوری سے فائدہ اٹھا کر اصل سے کئی گنا زائدکرایہ لیا جاتا ہے۔
3۔ اکثر رکشے CNGکے ناغے والے دن LPGیا پٹرول کا استعمال کرتے ہیں جو انتہائی خطرناک ہے اور اس کی وجہ سے کئی جان لیوا حادثات اور دھماکے ہو چکے ہیں۔
ٹیکسی:
کار گاڑی ایک آرام دہ سواری ہے جو سفر کو محفوظ، پُرسُکون اور تیز رفتار بناتی ہے، مگر افسوس ہمارے ملک میں یہ سواری اب کچھ اس حال میں پہنچ گئی ہے؛
1۔ ٹیکسیوں کی تعداد بہت کم رہ گئی ہے، ائیر پورٹ، ریلوے اسٹیشن، بس اڈوں اور ہسپتالوں کے نزدیک ہی دستیاب ہوتی ہیں، ان مقامات کے علاوہ کراچی جیسے بڑے شہر میں بھی آپ کو ٹیکسی بڑی مشکل سے ملے گی۔
2۔ ائیر پورٹ کے علاوہ کسی ٹیکسی میں کرایہ میٹر نہیں ملیں گے۔ اپنی مرضی سے من مانا کرایہ وصول کیا جاتا ہے۔
3۔ اچھی، نئی اور قابلِ استعمال ٹیکسیاں صرف ائیر پورٹ پر ہی ملیں گی۔ شہر میں اکثر ٹیکسیاں انتہائی خستہ حالت میں چلتی نظر آتی ہیں(یہ ٹیکسیاں 30 سے 45 سال پرانی گاڑیوں کے ڈھانچوں پر مشتمل ہوتی ہیں)، ان کی حالت کے پیشِ نظر آپ ایسی ٹیکسی میں بیٹھنا ہرگز پسند نہیں کریں گے۔
سائیکل، موٹر سائیکل، آٹو رکشہ اور ٹیکسی کبھی کسی زمانے میں احتیاط، حفاظت اور ذمہ داری کی علامت ہوا کرتے تھے مگر آج یہ خطرناک حادثات کا سبب صرف اس لیے بن گئے ہیں کہ ہم نے ان سواریوں کے استعمال کے جو قاعدے ، قانون اور اصول لازمی تھے ، انہیں پسِ پُشت ڈال دیا اور اپنی جہالت کے سبب انہیں جان لیوا، خطرناک اور تکلیف دہ بنا لیا، یہ ہماری جہالت ہی ہے جو ہمیں مفید اشیاء کو ضرر رساں بنا دینے پر مجبور کر دیتی ہے۔
آئیندہ پوسٹ میں انشاءاللہ اس موضوع پر مزید بحث جاری رہے گی۔(کچھ اور سواریاں زیر بحث ہونگی)
پڑھنا جاری رکھیں